(Bal-e-Jibril-124) (مسجد قرطبہ) Masjid-e-Qurtuba

مسجد قرطبہ (ہسپانیہ کی سرزمین، بالخصوص قُرطُبہ میں لِکھّی گئی)

سلسلہ روز و شب، نقش گر حادثات
سلسلہ روز و شب، اصل حیات و ممات
نقش گر حادثات: واقعات کے ہونے کا باعث۔
MOSQUE OF CORDOBA
The succession of day and night is the architect of events. The succession of day and night is the fountain-head of life and death.
سلسلہ روز و شب، تار حریر دو رنگ
جس سے بناتی ہے ذات اپنی قبائے صفات
قبا: لباس۔. حرير: ریشم ۔
The succession of day and night is a two-tone silken twine. With which the Divine Essence, prepares its apparel of Attributes.
سلسلہ روز و شب، ساز ازل کی فغاں
جس سے دکھاتی ہے ذات زیروبم ممکنات

The succession of day and night is the reverberation of the symphony of Creation. Through its modulations, the Infinite demonstrates the parameters of possibilities.
تجھ کو پرکھتا ہے یہ، مجھ کو پرکھتا ہے یہ
سلسلہ روز و شب، صیرفی کائنات
صيرفي: صراف کی جمع ؛ صراف یعنی پرکھنے والا۔
Now sitting in judgement on you; now setting a value on me. The succession of day and night is the touchstone of the universe; (one who sifts pure from the impure).
تو ہو اگر کم عیار، میں ہوں اگر کم عیار
موت ہے تیری برات، موت ہے میری برات

But what if you are found wanting; what if I am found wanting. Death is your ultimate destiny; death is my ultimate destiny.
تیرے شب وروز کی اور حقیقت ہے کیا
ایک زمانے کی رو جس میں نہ دن ہے نہ رات

What else is the reality of your days and nights? Besides a surge in the river of time; sans day, sans night.
آنی و فانی تمام معجزہ ہائے ہنر
کار جہاں بے ثبات، کار جہاں بے ثبات!

Frail and evanescent, all miracles of ingenuity; transient, all temporal attainments, ephemeral, all worldly accomplishments.
اول و آخر فنا، باطن و ظاہر فنا
نقش کہن ہو کہ نو، منزل آخر فنا

Annihilation is the end of all beginnings; annihilation is the end of all ends. Extinction is the fate of everything; hidden or manifest, old or new.
ہے مگر اس نقش میں رنگ ثبات دوام
جس کو کیا ہو کسی مرد خدا نے تمام

Yet in this very scenario indelible is the stamp of permanence’ on the deeds of the good and godly.
مرد خدا کا عمل عشق سے صاحب فروغ
عشق ہے اصل حیات، موت ہے اس پر حرام

Deeds of the godly radiate with Love; the essence of life, which death is forbidden to touch.
تند و سبک سیر ہے گرچہ زمانے کی رو
عشق خود اک سیل ہے، سیل کو لیتاہے تھام
سيل: سیلاب۔ تند و سبک: تیز اور بے آواز۔
Fast and free flows the tide of time, but Love itself is a tide that stems all tides.
عشق کی تقویم میں عصررواں کے سوا
اور زمانے بھی ہیں جن کا نہیں کوئی نام
عصررواں: زمانہ جو جاری ہو۔ تقويم: جنتری، کلینڈر۔
In the chronicle of Love there are times other than the past, the present and the future; times for which no names have yet been coined.
عشق دم جبرئیل، عشق دل مصطفی
عشق خدا کا رسول، عشق خدا کا کلام

Love is the breath of Jibril. Love is the heart of Holy Prophet (PBUH).
Love is the messenger of God. Love is the Word of God.
عشق کی مستی سے ہے پیکر گل تابناک
عشق ہے صہبائے خام، عشق ہے کاس الکرام
پيکر گل: مٹی کا بت، انسان۔
صہبائے خام: وہ شراب جس میں کوئی چیز ملی نہ ہو، خالص۔
کاس الکرام: اہل کرم کا پیالہ جس سے دوسروں کو بھی حصّہ ملے۔
Love is ecstasy lends luster to earthly forms. Love is the heady wine, Love is the grand goblet.
عشق فقیہ حرم، عشق امیر جنود
عشق ہے ابن السبیل، اس کے ہزاروں مقام
ابن السبيل: مسافر جنود: فوجیں، لشکر
Love is the commander of marching troops, Love is a wayfarer with many a way-side abode.
عشق کے مضراب سے نغمہ تار حیات
عشق سے نور حیات، عشق سے نار حیات

Love is the plectrum that brings music to the string of life. Love is the light of life, Love is the fire of life.
اے حرم قرطبہ! عشق سے تیرا وجود
عشق سراپا دوام، جس میں نہیں رفت و بود
رفت و بود: گیا اور تھا یعنی فنا ہو جانا۔
To Love, you owe your being, O, Haram of Cordoba; to Love, that is eternal; never waning, never fading.
رنگ ہو یا خشت و سنگ، چنگ ہو یا حرف و صوت
معجزہ فن کی ہے خون جگر سے نمود
خشت و سنگ: اینٹ اور پتّھر
چنگ: مونہہ سے بجایا جانے والا آلہء موسیقی۔
Just the media these pigments, bricks and stones; this harp, these words and sounds, just the media. The miracle of art springs from the lifeblood of the artist!
(Chung: Musical instrument that is played with mouth.)
قطرہ خون جگر، سل کو بناتا ہے دل
خون جگر سے صدا سوز و سرور و سرود
سل: پتّھر۔
A droplet of the lifeblood transforms a piece of dead rock into a living heart; An impressive sound, into a song of solicitude, A refrain of rapture or a melody of mirth.
تیری فضا دل فروز، میری نوا سینہ سوز
تجھ سے دلوں کا حضور، مجھ سے دلوں کی کشود
دلوں کي کشود: دلوں کا کھل جانا۔
The aura you exude, illumines the heart. My plaint kindles the soul. You draw the hearts to the Presence Divine, I inspire them to bloom and blossom.
عرش معلی سے کم سینہ آدم نہیں
گرچہ کف خاک کی حد ہے سپہر کبود
کف خاک: مٹھی بھر خاک – انسان۔
سپہر کبود: نیلا آسمان۔
No less exalted than the Exalted Throne; is the throne of the heart, the human breast! Despite the limit of azure skies; ordained for this handful of dust.
پیکر نوری کو ہے سجدہ میسر تو کیا
اس کو میسر نہیں سوز و گداز سجود
پيکر نوري: نورانی وجود یعنی فرشتے۔
Celestial beings, born of light; do have the privilege of supplication, but unknown to them are the verve and warmth of prostration.
کافر ہندی ہوں میں، دیکھ مرا ذوق و شوق
دل میں صلوہ و درود، لب پہ صلوہ و درود

An Indian infidel, perchance, am I; but look at my fervour, my ardour. ‘Blessings and peace upon the Prophet,’ sings my heart. ‘Blessings and peace upon the Prophet,’ echo my lips.
شوق مری لے میں ہے، شوق مری نے میں ہے
نغمہ ‘اللہ ھو’ میرے رگ و پے میں ہے

My song is the song of aspiration. My lute is the serenade of longing. Every fibre of my being resonates with the refrains of Allah hoo!
تیرا جلال و جمال، مرد خدا کی دلیل
وہ بھی جلیل و جمیل، تو بھی جلیل و جمیل

Your beauty, your majesty, personify the graces of the man of faith. You are beautiful and majestic. He too is beautiful and majestic.
تیری بنا پائدار، تیرے ستوں بے شمار
شام کے صحرا میں ہو جیسے ہجوم نخیل
ہجوم نخيل: کھجور کے درختوں کا جھنڈ۔
Your foundations are lasting, your columns countless; like the profusion of palms in the plains of Syria.
تیرے در و بام پر وادی ایمن کا نور
تیرا منار بلند جلوہ گہ جبرئیل

Your arches, your terraces, shimmer with the light that once flashed in the Valley of Aiman. Your soaring minaret, all aglow in the resplendence of Jibril’s glory.
مٹ نہیں سکتا کبھی مرد مسلماں کہ ہے
اس کی اذانوں سے فاش سر کلیم و خلیل

The Muslim is destined to last as his Azan holds the key to the mysteries of the perennial message of Abraham and Moses.
اس کی زمیں بے حدود، اس کا افق بے ثغور
اس کے سمندر کی موج، دجلہ و دنیوب و نیل
ثغور: (ثغر کی جمع) سرحدوں کے بغیر بے
His world knows no boundaries, his horizon, no frontiers. Tigris, Danube and Nile: Billows of his oceanic expanse.
اس کے زمانے عجیب، اس کے فسانے غریب
عہد کہن کو دیا اس نے پیام رحیل
رحيل: کوچ –سفر کا آغاز
Fabulous, have been his times! Fascinating, the accounts of his achievements! He it was, who bade the final adieu to the outworn order.
ساقی ارباب ذوق، فارس میدان شوق
بادہ ہے اس کا رحیق، تیغ ہے اس کی اصیل
رحيق: خالص اور صاف شراب۔ فارس: شہسوار۔
A cup-bearer is he; with the purest wine for the connoisseur; a cavalier in the path of Love with a sword of the finest steel.
مرد سپاہی ہے وہ اس کی زرہ ‘لا الہ’
سایہ شمشیر میں اس کہ پنہ ‘لا الہ’

A combatant, with ‘La Ilah’ as his coat of mail. Under the shadow of flashing scimitars, ‘La Ilah’ is his protection.
تجھ سے ہوا آشکار بندہ مومن کا راز
اس کے دنوں کی تپش، اس کی شبوں کا گداز

Your edifice unravels the mystery of the faithful; The fire of his fervent days, the bliss of his tender nights.
اس کا مقام بلند، اس کا خیال عظیم
اس کا سرور اس کا شوق، اس کا نیاز اس کا ناز

Your grandeur calls to mind the loftiness of his station, the sweep of his vision; his rapture, his ardour, his pride, his humility.
ہاتھ ہے اللہ کا بندئہ مومن کا ہاتھ
غالب و کار آفریں، کارکشا، کارساز

The might of the man of faith is the might of the Almighty: Dominant, creative, resourceful, consummate.
خاکی و نوری نہاد، بندہ مولا صفات
ہر دو جہاں سے غنی اس کا دل بے نیاز
نوري نہاد: جس کی فطرت نوری ہو – فرشتہ صفت۔
He is terrestrial with celestial aspect; a being with the qualities of the Creator. His contented self has no demands on this world or the other.
اس کی امیدیں قلیل، اس کے مقاصد جلیل
اس کی ادا دل فریب، اس کی نگہ دل نواز

His desires are modest; his aims exalted; his manner charming; his ways winsome.
نرم دم گفتگو، گرم دم جستجو
رزم ہو یا بزم ہو، پاک دل و پاک باز

Soft in social exposure, tough in the line of pursuit. But whether in fray or in social gathering; ever chaste at heart, ever clean in conduct.
نقطہ پرکار حق، مرد خدا کا یقیں
اور یہ عالم تمام وہم و طلسم و مجاز

In the celestial order of the macrocosm, his immutable faith is the centre of the Divine Compass. All else: illusion, sorcery, fallacy.
عقل کی منزل ہے وہ، عشق کا حاصل ہے وہ
حلقہ آفاق میں گرمی محفل ہے وہ

He is the journey’s end for reason, he is the raison d ’etre of Love. An inspiration in the cosmic communion.
کعبہ ارباب فن! سطوت دین مبیں
تجھ سے حرم مرتبت اندلسیوں کی زمیں
دين مبيں: روشن دین یعنی اسلام
O, Mecca of art lovers! You are the majesty of the true tenet. You have elevated Andalusia to the eminence of the holy Harem.
ہے تہ گردوں اگر حسن میں تیری نظیر
قلب مسلماں میں ہے، اور نہیں ہے کہیں

Your equal in beauty, if any under the skies; is the heart of the Muslim and no one else.
آہ وہ مردان حق! وہ عربی شہسوار
حامل ‘ خلق عظیم’، صاحب صدق و یقیں
خلق عظيم: اشارہ ہے خلق عظيم کے مالک حضرت محمد (صلعم) کی طرف۔
Ah, those men of truth, those proud cavaliers of Arabia; endowed with a sublime character, imbued with candour and conviction.
جن کی حکومت سے ہے فاش یہ رمز غریب
سلطنت اہل دل فقر ہے، شاہی نہیں
رمز غريب: نادر نکتہ، عجیب بھید۔
Their reign gave the world an unfamiliar concept; that the authority of the brave and spirited lay in modesty and simplicity, rather than pomp and regality.
جن کی نگاہوں نے کی تربیت شرق و غرب
ظلمت یورپ میں تھی جن کی خرد راہ بیں

Their sagacity guided the East and the West. In the dark ages of Europe, it was the light of their vision that lit up the tracks.
جن کے لہو کے طفیل آج بھی ہیں اندلسی
خوش دل و گرم اختلاط، سادہ و روشن جبیں
گرم اختلاط: میل جول میں پر تپاک۔
A tribute to their blood it is, that the Andalusians, even today, are effable and warm-hearted, ingenuous and bright of countenance.
آج بھی اس دیس میں عام ہے چشم غزال
اور نگاہوں کے تیر آج بھی ہیں دل نشیں

Even today in this land, eyes like those of gazelles are a common sight. And darts shooting out of those eyes, even today, are on target.
بوئے یمن آج بھی اس کی ہواوں میں ہے
رنگ حجاز آج بھی اس کی نواوں میں ہے

Its breeze, even today, is laden with the fragrance of Yemen. Its music, even today, carries strains of melodies from Hijaz.
دیدہ انجم میں ہے تیری زمیں، آسماں
آہ کہ صدیوں سے ہے تیری فضا بے اذاں

Stars look upon your precincts as a piece of heaven. But for centuries, alas! Your porticoes have not resonated with the call of the muezzin.
کون سی وادی میں ہے، کون سی منزل میں ہے
عشق بلا خیز کا قافلہ سخت جاں!

What distant valley, what way-side abode is holding back? That valiant caravan of rampant Love.
دیکھ چکا المنی، شورش اصلاح دیں
جس نے نہ چھوڑے کہیں نقش کہن کے نشاں
المني: جرمنی
Germany witnessed the upheaval of religious reforms; that left no trace of the old perspective.
حرف غلط بن گئی عصمت پیر کنشت
اور ہوئی فکر کی کشتی نازک رواں
پير کنشت: کلیسا کا سب سے بڑا بزرگ – پوپ۔
Infallibility of the church sage began to ring false. Reason, once more, unfurled its sails.
چشم فرانسیس بھی دیکھ چکی انقلاب
جس سے دگرگوں ہوا مغربیوں کا جہاں

France too went through its revolution; that changed the entire orientation of Western life.
ملت رومی نژاد کہنہ پرستی سے پیر
لذت تجدید سے وہ بھی ہوئی پھر جواں
ملت: مراد ہے اہل اٹلی ۔ رومي نژاد
Followers of Rome, feeling antiquated worshipping the ancientry, also rejuvenated themselves with the relish of novelty.
روح مسلماں میں ہے آج وہی اضطراب
راز خدائی ہے یہ، کہہ نہیں سکتی زباں

The same storm is raging today in the soul of the Muslim. A Divine secret it is; not for the lips to utter.
دیکھیے اس بحر کی تہ سے اچھلتا ہے کیا
گنبد نیلو فری رنگ بدلتا ہے کیا!
گنبد: آسمان۔ نيلو فري
Let us see what surfaces from the depths of the deep. Let us see what colour, the blue sky changes into.
وادی کہسار میں غرق شفق ہے سحاب
لعل بدخشاں کے ڈھیر چھوڑ گیا آفتاب
حاب: بادل ۔
Clouds in the yonder valley are drenched in roseate twilight. The parting sun has left behind mounds and mounds of rubies, the best from Badakhshan.
سادہ و پرسوز ہے دختر دہقاں کا گیت
کشتی دل کے لیے سیل ہے عہد شباب

Simple and doleful is the song of the peasant’s daughter: Tender feelings adrift in the tide of youth.
آب روان کبیر! تیرے کنارے کوئی
دیکھ رہا ہے کسی اور زمانے کا خواب
آب روان کبير: وادی الکبیر اندلس کا مشہور دریا جس کے دونوں کناروں پر قرطبہ آباد ہے۔
O, the ever-flowing waters of Guadalquivir! Someone on your banks is seeing a vision of some other period of time. (Guadalquivir: The well-known river of Cordoba, near which the Mosque is located.)
عالم نو ہے ابھی پردہ تقدیر میں
میری نگاہوں میں ہے اس کی سحر بے حجاب

Tomorrow is still in the curtain of intention, but its dawn is flashing before my mind’s eye.
پردہ اٹھا دوں اگر چہرئہ افکار سے
لا نہ سکے گا فرنگ میری نواوں کی تاب

Were I to lift the veil from the profile of my reflections, The West would be dazzled by its brilliance.
جس میں نہ ہو انقلاب، موت ہے وہ زندگی
روح امم کی حیات کشمکش انقلاب

Life without change is death. The tumult and turmoil of revolution, keep the soul of a nation alive.
صورت شمشیر ہے دست قضا میں وہ قوم
کرتی ہے جو ہر زماں اپنے عمل کا حساب

Keen, as a sword in the hands of Destiny: Is the nation that evaluates its actions at each step.
نقش ہیں سب ناتمام خون جگر کے بغیر
نغمہ ہے سودائے خام خون جگر کے بغیر

Incomplete are all creations without the lifeblood of the creator. Soulless is the melody without the lifeblood of the maestro.
(Translated by Naeem Siddiqui)

%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close