(Bang-e-Dra-101) (ترانہ ملی) Tarana-e-Milli

چین و عرب ہمارا، ہندوستاں ہمارا
مسلم ہیں ہم، وطن ہے سارا جہاں ہمارا

THE MUSLIM NATIONAL ANTHEM
China and Arabia are ours, India is also ours; we are Muslims, whole world is homeland of ours.
توحید کی امانت سینوں میں ہے ہمارے
آساں نہیں مٹانا نام و نشاں ہمارا

The trust of Divine Unity is in the breasts of ours; it is not easy to destroy the identity of ours.
دنیا کے بت کدوں میں پہلا وہ گھر خدا کا
ہم اس کے پاسباں ہیں، وہ پاسباں ہمارا

Among the world’s temples that first House of God; we are its sentinels, it is the sentinel of ours.
تیغوں کے سائے میں ہم پل کر جواں ہوئے ہیں
خنجر ہلال کا ہے قومی نشاں ہمارا

We have been brought up under the shade of swords; the crescent’s dagger is the national insignia of ours.
مغرب کی وادیوں میں گونجی اذاں ہماری
تھمتا نہ تھا کسی سے سیل رواں ہمارا

Our Adhan echoed in the valleys of the West; none could stop the advancing flood of ours.
باطل سے دنبے والے اے آسماں نہیں ہم
سو بار کر چکا ہے تو امتحاں ہمارا

We cannot be bowed down by falsehood, O sky! Hundreds of times you have done tests of ours.
اے گلستان اندلس! وہ دن ہیں یاد تجھ کو
تھا تیری ڈالیوں پر جب آشیاں ہمارا

O garden of Andalus! Do you remember the days when your branches harbored the nest of ours?
اے موج دجلہ! تو بھی پہچانتی ہے ہم کو
اب تک ہے تیرا دریا افسانہ خواں ہمارا

O wave of the Tigris! You also recognize us; your river still recites the stories of ours.
اے ارض پاک! تیری حرمت پہ کٹ مرے ہم
ہے خوں تری رگوں میں اب تک رواں ہمارا

O Holy Land! For your honor we fought to the bitter end; still flowing in your veins is the blood of ours.
سالار کارواں ہے میر حجاز اپنا
اس نام سے ہے باقی آرام جاں ہمارا
مير حجاز: مراد ہے محمد (صلعم)۔
The Hijaz’s Chief is the commander of our caravan; this name preserves solace of the hearts of ours.
اقبال کا ترانہ بانگ درا ہے گویا
ہوتا ہے جادہ پیما پھر کارواں ہمارا
جادہ پيما: سفر پر روانہ۔
This anthem of Iqbal is the clarion’s* call so to say; again prepares for the journey the caravan of ours.
* This is also a subtle reference to his book Bang-i-Dara which contains material for the rejuvenation and renaissance of world Muslims.)
(Translated by Dr. M.A.K. Khalil)

(از- علامہ محمد اقبال ؒ ، بانگِ درا: ملی ترانہ)

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: