(Zarb-e-Kaleem-013) (شکر و شکایت) Shukar-o-Shikayat

شکر و شکایت

میں بندہ ناداں ہوں، مگر شکر ہے تیرا
رکھتا ہوں نہاں خانہ لاہوت سے پیوند
لاہوت: عالم بالا، تصوّف میں وہ مقام جہاں سالک کو فنا فی اللہ کا درجہ حاصل ہوتا ہے۔
اک ولولہ تازہ دیا میں نے دلوں کو
لاہور سے تا خاک بخارا و سمرقند

تاثیر ہے یہ میرے نفس کی کہ خزاں میں
مرغان سحر خواں مری صحبت میں ہیں خورسند
خورسند: خوش باش۔
لیکن مجھے پیدا کیا اس دیس میں تو نے
جس دیس کے بندے ہیں غلامی پہ رضا مند



Roman Urdu:


English Translation:


شکر و شکایت

میں بندہ ناداں ہوں، مگر شکر ہے تیرا
رکھتا ہوں نہاں خانہ لاہوت سے پیوند
لاہوت: عالم بالا، تصوّف میں وہ مقام جہاں سالک کو فنا فی اللہ کا درجہ حاصل ہوتا ہے۔
Though unwise, thanks to God I must express for bonds with celestial world that I possess.
اک ولولہ تازہ دیا میں نے دلوں کو
لاہور سے تا خاک بخارا و سمرقند

My songs fresh zeal to hearts of men imparts, their charm extends to lands that lie apart.
تاثیر ہے یہ میرے نفس کی کہ خزاں میں
مرغان سحر خواں مری صحبت میں ہیں خورسند
خورسند: خوش باش۔
In Autumn my breath makes birds that chirp in morn, imbibe much joy and feel no more forlorn.
لیکن مجھے پیدا کیا اس دیس میں تو نے
جس دیس کے بندے ہیں غلامی پہ رضا مند

O God, to such a land I have been sent, where men in abject bondage feel content.
(Translated by Syed Akbar Ali Shah)

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: