(Zarb-e-Kaleem-104) (آزادی نسواں) Azadi-e-Niswan

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فیصلہ میں کر نہیں سکتا
گو خوب سمجھتا ہوں کہ یہ زہر ہے، وہ قند
مکنوں: میٹھی چیز۔

کیا فائدہ، کچھ کہہ کے بنوں اور بھی معتوب
پہلے ہی خفا مجھ سے ہیں تہذیب کے فرزند
معتوب: ناراضگی کا نشانہ۔

اس راز کو عورت کی بصیرت ہی کرے فاش
مجبور ہیں، معذور ہیں، مردان خرد مند

کیا چیز ہے آرائش و قیمت میں زیادہ
آزادی نسواں کہ زمرد کا گلوبند

 

Azadi-e-Niswan
Iss Behas Ka Kuch Faisla Main Kar Nahin Sakta
Go Khoob Samajhta Hun Ke Ye Zaher Hai, Woh Qand

Kya Faida, Kuch Keh Ke Banon Aur Bhi Maatob
Pehle Hi Khafa Mujh Se Hain Tehzeeb Ke Farzand

Iss Raaz Ko Aurat Ki Baseerat Hi Kare Faash
Majboor Hain, Maazoor Hain, Mardan-e-Khirdmand

Kya Cheez Hai Araish-o-Qeemat Mein Zaida
Azadi-e-Niswan Ke Zumurd Ka Gluband !


Emancipation Of Women
I know quite well that one despoils, While other is like candy sweet:
I can not give a verdict true which needs of Quest can fully meet.

I like to make no more remark and earn the wrath of present age:
Already the sons of modern cult ʹGainst me are full of ire and rage.

The insight owned by woman can this subtle point with ease reveal:
Constrained and helpless, wise and sage, With knotty point they can not deal.

It is an uphill task to judge what is more precious, lends much grace:
Emancipation for fair sex or aught, or emerald‐wrought superb neck‐lace?
(Translated by Syed Akbar Ali Shah)

آزادئ نسواں
اس نظم اقبال نے بڑی خوبی کے ساتھ آزادی نسواں کے مسئلہ پر اپنی رائے کا اظہار کیا ہے یعنی درپردہ پردہ کی حمایت بھی کر دی اور بظاہر کچھ نہیں کہا کہتے ہیں کہ
اگرچہ میں بخوبی جانتا ہوں کہ بے پردگی عورت کے حق میں زہر ہے اور پردہ اس زہر کا تریاق ہے لیکن میں مصلحتاً خاموش ہوں کیونکہ مغرب کے مقلدین کور، یعنی فیشن پرست مسلمان تو مجھ سے پہلے ہی ناراض ہیں، میں انہیں مزید ناراضگی کا موقع نہیں دینا چاہتا. 
‏ عورت کو اللہ نے اس معاملہ میں بڑی بصیرت عطا فرمائی ہے وہ خود فیصلہ کر سکتی ہے کہ آرائش اور قیمت میں کونسی چیز زیادہ ہے؟ 
‏آزادی ‏ اور بے پردگی یا زمرد گوبند یعنی پردہ نشینی؟ 
لفظ “زمردکاگلوبند” اس مصرع میں بہت لطف دے رہا ہے. اس کے تین معنی ہیں. بے پردہ عورتیں چونکہ زمرد کا گلوبند، پسند نہیں کرتیں اس لیے اس لفظ سے مراد ہے “پردہ گوبند سے مراد ہے پابندی اور قید پردہ بھی ایک قید  ہے. زمرد کا گلوبند بہت قیمتی چیز ہے. لہذا اقبال دریافت کرتے ہیں کہ تمہیں آزادی پسند ہے. جو ادنیٰ چیز ہے. یا زمرد کا گلوبند پسند ہے جو قیمتی چیز ہے؟ نیز مرد کا گوبند بہت قیمتی چیز ہے. جو عموماً شوہر جہیز میں پیش کرتا ہے اس لیے اس سے شوہر کی فرمابرداری بھی مراد ہو سکتی ہے

 

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: