(Bal-e-Jibril-053) (خرد مندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتدا کیا ہے) Khirad Mandon Se Kya Poochun Ke Meri Ibtada Kya Hai

خردمندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتدا کیا ہے

کہ میں اس فکر میں رہتا ہوں، میری انتہا کیا ہے
خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے
خدا بندے سے خود پوچھے، بتا تیری رضا کیا ہے
مقام گفتگو کیا ہے اگر میں کیمیا گرہوں
یہی سوز نفس ہے، اور میری کیمیا کیا ہے!
نظر آئیں مجھے تقدیر کی گہرائیاں اس میں
نہ پوچھ اے ہم نشیں مجھ سے وہ چشم سرمہ سا کیا ہے
اگر ہوتا وہ *مجذوب فرنگی اس زمانے میں
تو اقبال اس کو سمجھاتا مقام کبریا کیا ہے
نواے صبح گاہی نے جگر خوں کر دیا میرا
خدایا جس خطا کی یہ سزا ہے، وہ خطا کیا ہے!

علامہ محمد اقبال ؒ

*جرمنی کا مشہور محذوب فلسفی نطشہ جو اپنے قلبی واردات کا صحیح اندازہ نہ کرسکا اور اس لئے اس کے فلسفہ نہ افکار نے اسے غلط راستے پر ڈال دیا۔

English Translation:

خردمندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتدا کیا ہے
کہ میں اس فکر میں رہتا ہوں، میری انتہا کیا ہے
What should I ask the sages about my origin: I am always wanting to know my goal.
خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے
خدا بندے سے خود پوچھے، بتا تیری رضا کیا ہے
Develop the self so that before every decree God will ascertain from you: ‘What is your wish?’
مقام گفتگو کیا ہے اگر میں کیمیا گرہوں
یہی سوز نفس ہے، اور میری کیمیا کیا ہے!
It is nothing to talk about if I transform base selves into gold: The passion of my voice is the only alchemy I know!
نظر آئیں مجھے تقدیر کی گہرائیاں اس میں
نہ پوچھ اے ہم نشیں مجھ سے وہ چشم سرمہ سا کیا ہے
O Comrade, I beheld the secrets of Destiny in them: What should I tell you of those lustrous eyes!
اگر ہوتا وہ مجذوب فرنگی اس زمانے میں
تو اقبال اس کو سمجھاتا مقام کبریا کیا ہے
Only if that majzub* of the West were living in these times, Iqbal could have explained to him the ‘I am.’

نواے صبح گاہی نے جگر خوں کر دیا میرا
خدایا جس خطا کی یہ سزا ہے، وہ خطا کیا ہے!
My heart bleeds from the song of the early morning: O Lord! What is the sin for which this is a punishment?
[Translated by Syed Akbar Ali Shah]

* Allusion to Nietzsche: the famous self-absorbed German philosopher who could not interpret his inner experience correctly and was therefore misled by his philosophical thoughts.





Roman Urdu:
Khird-Mandon Se Kya Puchon Ke Meri Ibtida Kya Hai
Ke Main Iss Fikar Mein Rehta Hun, Meri Intiha Kya Hai


Khudi Ko Kar Buland Itna Ke Har Taqdeer Se Pehle
Khuda Bande Se Khud Puche, Bata Teri Raza Kya Hai


Maqam-e-Guftugu Kya Hai Agar Main Keemiya-Gar Hun
Yehi Souz-e-Nafas Hai, Aur Meri Keemiya Kya Hai!


Nazar Ayeen Mujhe Taqdeer Ki Gehraiyan Uss Mein
Na Puch Ae Hum-Nasheen Mujh Se Woh Chashm-e-Surma Sa Kya Hai


Agar Hota Woh Majzoob*-e-Farangi Iss Zamane Mein
To Iqbal Uss Ko Samjhata Maqam-e-Kibriya Kya Hai

Nawa-e-Subahgahi Ne Jigar Khoon Kar Diya Mera
Khudaya Jis Khata Ki Ye Saza Hai, Woh Khata Kya Hai!

*Germani Ka Mashoor Majzoob Falsafi Natsha Jo Apne Qalbi Wardaat Ka Sahih Andaza Na Kar Saka Aur Issliye Iss Ke Falsafiyana Afkar Ne Isse Gallat Raste Par Dal Diya.

Dr. Muhammad Allama Iqbal R.A
%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close