(Bal-e-Jibril-165) (پنجاب کے پیرزادوں سے) Punjab Ke Peerzadon Se

پنچاب کے پیرزادوں سے

حاضر ہوا میں شیخ مجدد کی لحد پر
وہ خاک کہ ہے زیر فلک مطلع انوار
اس خاک کے ذروں سے ہیں شرمندہ ستارے
اس خاک میں پوشیدہ ہے وہ صاحب اسرار
گردن نہ جھکی جس کی جہانگیر کے آگے
جس کے نفس گرم سے ہے گرمی احرار
وہ ہند میں سرمایہء ملت کا نگہباں
اللہ نے بر وقت کیا جس کو خبردار
کی عرض یہ میں نے کہ عطا فقر ہو مجھ کو
آنکھیں مری بینا ہیں، و لیکن نہیں بیدار!
آئی یہ صدا سلسلہء فقر ہوا بند
ہیں اہل نظر کشور پنجاب سے بیزار
عارف کا ٹھکانا نہیں وہ خطہ کہ جس میں
پیدا کلہ فقر سے ہو طرئہ دستار
باقی کلہ فقر سے تھا ولولہء حق
طروں نے چڑھایا نشہء ‘خدمت سرکار

علامہ محمد اقبال ؒ

English Translation:
پنچاب کے پیرزادوں سے حاضر ہوا میں شیخ مجدد کی لحد پر وہ خاک کہ ہے زیر فلک مطلع انوار
TO THE PUNJAB PIRS I stood by the Reformer’s tomb: that dust whence here below an orient splendour breaks;
اس خاک کے ذروں سے ہیں شرمندہ ستارے اس خاک میں پوشیدہ ہے وہ صاحب اسرار
Dust before whose least speck stars hang their heads, dust shrouding that high knower of things unknown.
گردن نہ جھکی جس کی جہانگیر کے آگے جس کے نفس گرم سے ہے گرمی احرار
Who to Jehangir would not bend his neck, whose ardent breath fans every free heart’s ardour?
وہ ہند میں سرمایہء ملت کا نگہباں اللہ نے بر وقت کیا جس کو خبردار
Whom Allah sent in season to keep watch in India on the treasure-house of Islam.
کی عرض یہ میں نے کہ عطا فقر ہو مجھ کو آنکھیں مری بینا ہیں، و لیکن نہیں بیدار!
I craved the saints’ gift, other-worldliness for my eyes saw, yet dimly. Answer came:
آئی یہ صدا سلسلہء فقر ہوا بند ہیں اہل نظر کشور پنجاب سے بیزار
Closed is the long roll of the saints; this Land of the Five Rivers stinks in good men’s nostrils.
عارف کا ٹھکانا نہیں وہ خطہ کہ جس میں پیدا کلہ فقر سے ہو طرئہ دستار
God’s people have no portion in that country where lordly tassel sprouts from monkish cap.
باقی کلہ فقر سے تھا ولولہء حق طروں نے چڑھایا نشہء ‘خدمت سرکار
That cap bred passionate faith, this tassel breeds passion for playing pander to Government.’
(Translated by V G Kiernan)


Roman Urdu:
Punjab Ke Peerzadon Se

Hazir Huwa Main Sheikh-e-Mujadid (R.A.) Ki Lehad Par
Woh Khak Ke Hai Zair-e-Falak Matla-e-Anwar

Iss Khak Ke Zarron Se Hain Sharminda Sitare
Iss Khak Main Poshida Hai Woh Sahib-e-Asrar

Gardan Na Jhuki Jis Ki Jhangeer Ke Agay
Jis Ke Nafs-e-Garam Se Hai Garmi-e-Arhar

Woh Hind Mein Sarmaya-e-Millat Ka Negheban
Allah Ne Barwaqt Kiya Jis Ko Khabardar

Ki Arz Ye Main Ne Ke Atta Faqr Ho Mujh Ko
Ankhain Meri Beena Hain, Walekin Nahi Baidar!

Ayi Ye Sada Silsila-e-Faqr Huwa Band
Hain Ahl-e-Nazar Kishwar-e-Punjab Se Bezar

Arif Ka Thikana Nahin Woh Khitta Ke Jis Mein
Paida Kulah-e-Faqr Se Ho Turra-e-Dastar

Baqi Kula-e-Faqr Se Tha Walwala-e-Haq
Turron  Ne Charhaya Nasha-e-‘Khidmat-e-Sarkar’!

Dr. Allama Muhammad Iqbal R.A

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: