(Zarb-e-Kaleem-082) (آزادی فکر) Azadi-e-Fikar

آزادی فکر

آزادی افکار سے ہے ان کی تباہی
رکھتے نہیں جو فکر و تدبر کا سلیقہ

ہو فکر اگر خام تو آزادی افکار
انسان کو حیوان بنانے کا طریقہ

اقبال کہتے ہیں کہ آج کل حریت فکر کا بہت چرچا ہے. جیسے دیکھوں “آزادی کا فکر کا وکیل بنا ہوا ہے، اور پوری قوت کے ساتھ کہتا ہے کہ آزادی فکر ہمارا پیدائشی حق ہے. مطلب اس سے یہ ہوتا ہے کہ اس دور میں ہر شخص کو غور و فکر سوچ وچار، اور اپنے خیالات کے اظہار کی آزادی ہونی چاہیے.

اقبال کہتے ہیں کہ بلاشبہ آزادی فکر بہت اچھی بات ہے. لیکن جن لوگوں کو تفکر یعنی فکر کرنے کا طریقہ نہیں آتا، جو تدبر یعنی غور فکر کے مبادی سے بھی واقف نہیں ہیں، اگر وہ اپنے ناقص اور خام خیالات لوگوں کے سامنے پیش کر دینا شروع کر دیں گے تو پھر بھی تباہ ہو گے اور دوسروں کو بھی تباہ کریں گے. کیونکہ اندھا اندھوں کو راستہ نہیں دکھا سکتا.

فکر، اگر خام ہو، یعنی اگر کسی انسان نے، مرشد کامل کی صحبت میں بیٹھ کر اپنی فکر (عقل) کو چختہ نہیں کیا ہے، تو وہ قرآن مجید کا مطلب بھی غلط سمجھے گا، اور حدیث کا مفہوم بھی اس پر واضح نہیں ہو گا. پس وہ لوگوں کو بھی غلط راستہ پر چلائے گا، اور خود بھی غلط راستہ پر چلے گا اقبال کہتے ہیں کہ اگر آپ کسی انسان کو حیوان بنانا چاہتے ہیں، تو جس شخص کی فکر ابھی خام ہو اسے آزادی افکار عطا کر دیجئے.

اس کی مثال ایسی ہے کہ موٹر چلانی اچھی بات ہے. لیکن جس شخص کو چلانے کا طریقہ نہیں آتا وہ اگر موٹر چلائے گا، تو موٹر بھی ٹوٹ جائے گی، اور خود اسکی ہڈیاں بھی چور چور ہوجائیں گی. پس جس طرح موٹر چلانا ایک فن ہے، سوچنا بھی تو ایک فن ہے، اور بغیر استاد، نہ آسکتا ہے،

 

English Translation:

آزادی فکر

آزادی افکار سے ہے ان کی تباہی
رکھتے نہیں جو فکر و تدبر کا سلیقہ
ہو فکر اگر خام تو آزادی افکار
انسان کو حیوان بنانے کا طریقہ

FREEDOM OF THOUGHT
Free thinking can bring ’bout the ruin of those whose thoughts are low and mean: They don’t possess the mode and style of though (that may be chaste and clean.
If thoughts are raw and immature no good accrues to man in least: The utmost. that such thoughts can do is change of wan to state of beast.
[Translated by Syed Akbar Ali Shah]

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: