(Zarb-e-Kaleem-165) (ابی سینیا) Abyssinia

ابی سینیا

یورپ کے کرگسوں کو نہیں ہے ابھی خبر
ہے کتنی زہر ناک ابی سینیا کی لاش
ہونے کو ہے یہ مردہ دیرینہ قاش قاش!

قاش قاش: ٹکڑے ٹکڑے۔
کرگسوں: گدھوں۔

تہذیب کا کمال شرافت کا ہے زوال
غارت گری جہاں میں ہے اقوام کی معاش
ہر گرگ کو ہے برہ معصوم کی تلاش!

برہ: بھیڑ کا بچہ ۔
گرگ: بھیڑیا۔

اے وائے آبروئے کلیسا کا آءنہ
روما نے کر دیا سر بازار پاش پاش
پیر کلیسیا! یہ حقیقت ہے دلخراش


ابی سینیا

جب…. اگست…… کو اخباروں میں یہ خبر شائع ہوئی کہ اٹلی نے بلاوجہ ابی سینیا پر حملہ کردیا ہے تو علامہ کو بہت افسوس ہوا اور انہوں نے اپنے تاثرات قلبی کا اس طرح اظہار کیا.
یورپ کی مردار خور بلکہ حرام خور حکومتوں نے، اٹلی کے اس ظالمانہ اقدام کو کی کوئی مذمت نہیں کی اور اس کی وجہ یہ ہے کہ ان شیطان حکومتوں نے دل میں یہ سوچا ہے کہ جب اطالیہ اس ملک کو فتح کرے گا تو ہم بھی اپنا حصہ لینے پہنچ جائیں گے لیکن یورپ کے ان گدوں کو ابھی یہ خبر نہیں ہے ابی سینا حبشہ کی لاش اس قدر زہر آلود ثابت ہو گی کہ جو کھائے گا وہ مر جائے گا.
واضح ہوکہ اقبال نے یہ پیشگوئی…… میں کی تھی جبکہ دوسری جنگ عظیم کے آثار کہیں نمایاں نہیں تھے لیکن ان کی یہ پیشگوئی حرف بحرف پوری ہوگئی.
مسولینی کو جس نے ایک بیگناہ ملک پر چڑھائی کی تھی سپاہی کی موت نصیب نہیں ہوئی بلکہ وہ کتے کی موت مارا گیا. 

علاوہ بڑیں چار سال کے بعد تمام اقوام یورپ جنہوں نے اس ظلم کا تماشہ دیکھا تھا اور ظلم کی مذمت سے چشم پوشی کی تھی، قہر الہی میں گرفتار ہو گئیں.
اس میں کوئی شک نہیں کہ تہذیب مغرب اپنے انتہائی عروج کو پہنچ گئی ہے لیکن یہ تسلیم کرنا پڑے گا کہ ان نام نہاد تہذیب نے اہل یورپ کو شرافت سے بالکل معرا دیا ہے یعنی وجہ ہے کہ ان مہذب قوموں نے لوٹ مار اور قتل وغارت کو اپنا ذریعہ معاش بنا رکھا ہے جس طرح بھیڑیا، بیگناہ، بکریوں کی تلاش میں رہتا ہے اسی طرح یہ اقوام بیگناہوں کا خون بہاتی رہتی ہیں.
افسوس! اٹلی نے حبشہ پر حملہ کرکے کلیسا مسیحیت کی عزت بسر خاک میں ملادی اور پیر کلیسا یعنی یورپ آف روم کو بھی اس حقیقت کا اعتراف کرنا پڑے گا کہ اٹلی کا یہ فعل انسانیت کی توہین ہے.

نوٹ: اقبال نے یورپ سے خطاب کرکے دراصل اس اعتراض کا جواب دیا ہے جو کلیسا اسلام پر کیا کرتی تھی کہ اسلام غارتگری کی تعلیم دیتا ہے اسلام مسلمانوں کی بد اعمالیوں کا ذمہ دار نہیں ہے علامہ کا مطلب یہ ہے کہ یورپ، اٹلی کے اس ظالمانہ اقدام کی کیا توجیہہ کرے گا؟ یہی تاکہ مسیحیت، عیسائیوں کے افعال بدکی ذمہ دار نہیں ہے تو یہی جواب ہم بھی دے سکتے ہیں.

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: