(Bal-e-Jibril-023) Woh Harf-e-Raaz Ke Mujh Ko Sikha Gaya Hai Janoon (وہ حرف راز کے مجھ کو سکھا گیا ہے جنوں)

وہ حرف راز کہ مجھ کو سکھا گیا ہے جنوں

وہ حرف راز کہ مجھ کو سکھا گیا ہے جنوں
خدا مجھے نفس جبرئیل دے تو کہوں

ستارہ کیا مری تقدیر کی خبر دے گا
وہ خود فراخی افلاک میں ہے خوار و زبوں

حیات کیا ہے، خیال و نظر کی مجذوبی
خودی کی موت ہے اندیشہ ہائے گونا گوں

عجب مزا ہے، مجھے لذت خودی دے کر
وہ چاہتے ہیں کہ میں اپنے آپ میں نہ رہوں

ضمیر پاک و نگاہ بلند و مستی شوق
نہ مال و دولت قاروں، نہ فکر افلاطوں
قاروں: بنی اسرائیل کا امیر ترین شخص جو راہ حق سے ہٹ گیا۔ اس پر سمجھانے بجھانے کا بھی کوئی اثر نہ ہوا اور اللہ تعالے نے اسے اس کے خاندان کے ساتھ زمین میں دھنسا دیا۔
سبق ملا ہے یہ معراج مصطفی سے مجھے
کہ عالم بشریت کی زد میں ہے گردوں

یہ کائنات ابھی ناتمام ہے شاید
کہ آرہی ہے دما دم صدائے ‘کن فیکوں’
کن فیکوں: قرآن کی اس آیت کی طرف اشارہ جس میں کہا گیا ہے کہ اللہ تعالے نے کائنات پیدا کرتے وقت کن کہا اور کائنات پیدا ہو گئی۔
علاج آتش رومی کے سوز میں ہے ترا
تری خرد پہ ہے غالب فرنگیوں کا فسوں

اسی کے فیض سے میری نگاہ ہے روشن
اسی کے فیض سے میرے سبو میں ہے جیحوں
جیحوں: ترکستان کا مشہور دریا۔

Roman Urdu:

Woh Harf-e-Raaz Ke Mujh Ko Sikha Gya Hai Junoon
Khuda Mujhe Nafs-e-Jibraeel De To Kahoon

Sitara Kya Meri Taqdeer Ki Khabar De Ga
Woh Khud Farakhi-e-Aflaak Mein Hai Khwaar-o-Zaboon

Hayat Kya Hai, Khiyal-o-Nazar Ki Majzoobi
Khudi Ki Mout Hai Andesha Ha’ay Goonagoon

Ajab Maza Hai, Mujhe Lazzat-e-Khudi De Kar
Woh Chahte Hain Ke Main Apne Aap Mein Na Rahoon

Zameer-e-Paak-o-Nigah-e-Buland-o-Masti-e-Shauq
Na Maal-o-Doulat-e-Qaroon, Na Fikar-e-Aflatoon

Sabaq Mila Hai Ye Miraaj-E-Mustafa (S.A.W.) Se Mujhe
Ke Alam-e-Bashriyat Ki Zad Mein Hai Gardoon

Ye Kainat Abhi Na-Tamam Hai Shaid
Ke Aa Rahi Hai Damadam Sada’ay ‘Kun Fayakoon’

Elaj Atish-E-Rumi Ke Soz Mein Hai Tera
Teri Khirad Pe Hai Ghalib Farangion Ka Fasoon

Ussi Ke Faiz Se Meri Nigah Hai Roshan
Ussi Ke Faiz Se Mere Saboo Mein Hai Jehoon

English Translation:
The breath of Gabriel if God on me bestow, I may in words express what Love has made me know.

How can the stars foretell what future holds in store? They roam perplex’d and mean in skies that have no shore.

To fix one’s mind and gaze on goal is life, in fact: To ego’s death to lead the thoughts that mind distract.

How strange! The bliss of self having bestowed on me God mighty will that I beside myself should be.

I neither like nor claim Plato’s thought or Croesus’ gold: Clean conscience, lofty gaze and zeal is all I hold.

By Holy Prophet’s Ascent this truth to me was taught, within the reach of man high heavens can be brought.

The Life perhaps is still raw and incomplete: Be and it becomes e’er doth a voice repeat.

Through his bounty great my vision shines and glows, and mighty Oxus too in my pitcher flows.

The West hath cast a spell on thine heart and mind: In Rumi’s burning flame a cure for thyself find.
(Translated by Syed Akbar Ali Shah)

Dr. Allama Muhammad Iqbal r.a

%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close