(Armaghan-e-Hijaz-08) (آواز غیب) Awaz-e-Ghaib

آواز غیب

آتی ہے دم صبح صدا عرش بریں سے
کھویا گیا کس طرح ترا جوہر ادراک!
جوہر ادراک: وہ قوّت جس کی نورانیت سے انسان کائنات کی ضروری باتوں کا علم حاصل کرتا ہے۔
کس طرح ہوا کند ترا نشتر تحقیق
ہوتے نہیں کیوں تجھ سے ستاروں کے جگر چاک
کند: جو تیز نہ رہا ہو۔
تو ظاہر و باطن کی خلافت کا سزاوار
کیا شعلہ بھی ہوتا ہے غلام خس و خاشاک
خس و خاشاک: گھاس پھوس۔
سزاوار: لائق۔
مہر و مہ و انجم نہیں محکوم ترے کیوں
کیوں تری نگاہوں سے لرزتے نہیں افلاک

اب تک ہے رواں گرچہ لہو تیری رگوں میں
نے گرمی افکار، نہ اندیشہ بے باک
انديشہ بے باک: بےخوف سوچ۔
روشن تو وہ ہوتی ہے، جہاں بیں نہیں ہوتی
جس آنکھ کے پردوں میں نہیں ہے نگہ پاک

باقی نہ رہی تیری وہ آئینہ ضمیری
اے کشتہء سلطانی و ملائی و پیری!

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: