(Armaghan-e-Hijaz-24)(آج وہ کشمیر ہے محکوم و مجبور و فقیر) Aaj Woh Kashmir Hai Mehkoom-o-Majboor-o-Faqeer

آج وہ کشمیر ہے محکوم و مجبور و فقیر

آج وہ کشمیر ہے محکوم و مجبور و فقیر
کل جسے اہل نظر کہتے تھے ایران صغیر
ایران صغیر: چھوٹا ایران۔
سینۂ افلک سے اٹھتی ہے آہ سوز ناک
مرد حق ہوتا ہے جب مرعوب سلطان و امیر

کہہ رہا ہے داستاں بیدردی ایام کی
کوہ کے دامن میں وہ غم خانۂ دہقان پیر
غم خانہء دہقان پیر: بوڑھے کسان کا گھر۔
آہ! یہ قوم نجیب و چرب دست و تر دماغ
ہے کہاں روز مکافات اے خدائے دیر گیر؟
قوم نجیب: شریف، اصیل۔
چرب دست: ہاتھوں سے نفیس کام کرنے والے، ہنرمند۔
تر دماغ: ذہین۔
روز مکافات: بدلے کا دن۔
خدائے دیر گیر: دیر سے گرفت کرنے والا خدا ۔

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: