(Armaghan-e-Hijaz-31) (آزاد کی رگ سخت ہے مانند رگ سنگ) Azad Ki Rag Sakht Hai Manid Rag-e-Sang

آزاد کی رگ سخت ہے مانند رگ سنگ

آزاد کی رگ سخت ہے مانند رگ سنگ
محکوم کی رگ نرم ہے مانند رگ تاک

محکوم کا دل مردہ و افسردہ و نومید
آزاد کا دل زندہ و پرسوز و طرب ناک
طرب ناک: خوشی سے بھرا ہوا۔
آزاد کی دولت دل روشن، نفس گرم
محکوم کا سرمایہ فقط دیدۂ نم ناک
دیدئہ نم ناک: آنسو بھری آنکھیں۔
محکوم ہے بیگانۂ اخلص و مروت
ہر چند کہ منطق کی دلیلوں میں ہے چالک
مروت: اچھا سلوک۔
اخلاص: خالص۔
ممکن نہیں محکوم ہو آزاد کا ہمدوش
وہ بندۂ افلک ہے، یہ خواجہ افلک
بندئہ افلاک: آسمانوں کا غلام
ہمدوش: برابر۔
خواجہ افلاک: آسمانوں کا آقا۔

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: