(Bang-e-Dra-069) (حسن و عشق) Husn-o-Ishq

حسن و عشق

جس طرح ڈوبتی ہے کشتی سیمین قمر
نور خورشید کے طوفان میں ہنگام سحر
جسے ہو جاتا ہے گم نور کا لے کر آنچل
چاندنی رات میں مہتاب کا ہم رنگ کنول
جلوہ طور میں جیسے ید بیضائے کلیم
موجہ نکہت گلزار میں غنچے کی شمیم
ہے ترے سیل محبت میں یونہی دل میرا
کشتی سیمین قمر: چاند کی چاندنی کی کشتی یعنی چاند۔
ید بیضائے کلیم: موسی (علیہ) (کی طرح کا) چمکتا ہوا ہاتھ۔
شمیم: خوشبو۔
تو جو محفل ہے تو ہنگامہء محفل ہوں میں
حسن کی برق ہے تو، عشق کا حاصل ہوں میں
تو سحر ہے تو مرے اشک ہیں شبنم تیری
شام غربت ہوں اگر میں تو شفق تو میری
مرے دل میں تری زلفوں کی پریشانی ہے
تری تصویر سے پیدا مری حیرانی ہے
حسن کامل ہے ترا، عشق ہے کامل میرا
شفق: صبح کی روشنی۔
ہے مرے باغ سخن کے لیے تو باد بہار
میرے بے تاب تخیل کو دیا تو نے قرار
جب سے آباد ترا عشق ہوا سینے میں
نئے جوہر ہوئے پیدا مرے آئینے میں
حسن سے عشق کی فطرت کو ہے تحریک کمال
تجھ سے سر سبز ہوئے میری امیدوں کے نہال
قافلہ ہو گیا آسودہء منزل میرا

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: