(Bang-e-Dra-082) (تنہائی) Tanhai

تنہائی

تنہائی شب میں ہے حزیں کیا
انجم نہیں تیرے ہم نشیں کیا!

یہ رفعت آسمان خاموش
خوابیدہ زمیں، جہان خاموش

یہ چاند، یہ دشت و در، یہ کہسار
فطرت ہے تمام نسترن زار

موتی خوش رنگ، پیارے پیارے
یعنی ترے آنسوئوں کے تارے

کس شے کی تجھے ہوس ہے اے دل!
قدرت تری ہم نفس ہے اے دل!

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: