(Bang-e-Dra-087) ( زندگی انسان کی ایک دم کے سوا کچھ بھی نہیں) Zindagi Insan Ki Ek Dam Ke Siwa Kuch Bhi Nahin

زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہیں

زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہیں
دم ہوا کی موج ہے، رم کے سوا کچھ بھی نہیں
رم: بھاگنا، چلنا۔
گل تبسم کہہ رہا تھا زندگانی کو مگر
شمع بولی، گریہء غم کے سوا کچھ بھی نہیں

راز ہستی راز ہے جب تک کوئی محرم نہ ہو
کھل گیا جس دم تو محرم کے سوا کچھ بھی نہیں

زائران کعبہ سے اقبال یہ پوچھے کوئی
کیا حرم کا تحفہ زمزم کے سوا کچھ بھی نہیں!

%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close