(Bang-e-Dra-088) (الہی عقل خجستہ پے کو ذرا سی دیوانگی سکھا دے) Elahi Aqal-e-Khajasta Pay Ko Zara Si Diwangi Sikha De

الہی عقل خجستہ پے کو ذرا سی دیوانگی سکھا دے

الہی عقل خجستہ پے کو ذرا سی دیوانگی سکھا دے
اسے ہے سودائے بخیہ کاری، مجھے سر پیرہن نہیں ہے
خجستہ پے: مبارک قدم والی۔
سودائے بخيہ کاري: سلائی کرنے کا خبط۔
سر پيرہن: لباس کا خیال یا سرا۔
ملا محبت کا سوز مجھ کو تو بولے صبح ازل فرشتے
مثال شمع مزار ہے تو، تری کوئی انجمن نہیں ہے

یہاں کہاں ہم نفس میسر، یہ دیس نا آشنا ہے اے دل!
وہ چیز تو مانگتا ہے مجھ سے کہ زیر چرخ کہن نہیں ہے
چرخ کہن: بوڑھا آسمان۔
نرالا سارے جہاں سے اس کو عرب کے معمار نے بنایا
بنا ہمارے حصار ملت کی اتحاد وطن نہیں ہے

کہاں کا آنا، کہاں کا جانا، فریب ہے امتیاز عقبی
نمود ہر شے میں ہے ہماری، کہیں ہمارا وطن نہیں ہے

مدیر ‘مخزن’ سے کوئی اقبال جا کے میرا پیام کہہ دے
جوکام کچھ کر رہی ہیں قومیں، انھیں مذاق سخن نہیں ہے
مخزن: رسالہ مخزن کا ایڈیٹر مدير

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: