(Bal-e-Jibril-011) (تجھے یاد کیا نہیں ہے میرے دل کا وہ زمانہ) Tujhe Yaad Kya Nahin Hai Mere Dil Ka Woh Zamana

تجھے یاد کیا نہیں ہے مرے دل کا وہ زمانہ

تجھے یاد کیا نہیں ہے مرے دل کا وہ زمانہ
وہ ادب گہ محبت، وہ نگہ کا تازیانہ

یہ بتان عصر حاضر کہ بنے ہیں مدرسے میں
نہ ادائے کافرانہ، نہ تراش آزرانہ

نہیں اس کھلی فضا میں کوئی گوشہء فراغت
یہ جہاں عجب جہاں ہے، نہ قفس نہ آشیانہ

رگ تاک منتظر ہے تری بارش کرم کی
کہ عجم کے مے کدوں میں نہ رہی مے مغانہ

مرے ہم صفیر اسے بھی اثر بہار سمجھے
انھیں کیا خبر کہ کیا ہے یہ نوائے عاشقانہ

مرے خاک و خوں سے تونے یہ جہاں کیا ہے پیدا
صلہ شہید کیا ہے، تب و تاب جاودانہ
تب و تاب جاودانہ: ہمیشہ رہنے والی چمک دمک۔
تری بندہ پروری سے مرے دن گزر رہے ہیں
نہ گلہ ہے دوستوں کا، نہ شکایت زمانہ

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: