(Bal-e-Jibril-020) (عالم و آب و خاک و باد! سر عیاں ہے تو کہ میں) Alam-e-Aab-o-Khak-o-Bad ! Sir-e-Ayan Hai Tu Ke Main

عالم آب و خاک و باد! سر عیاں ہے تو کہ میں

عالم آب و خاک و باد! سر عیاں ہے تو کہ میں
وہ جو نظر سے ہے نہاں، اس کا جہاں ہے تو کہ میں

وہ شب درد و سوز و غم، کہتے ہیں زندگی جسے
اس کی سحر ہے تو کہ میں، اس کی اذاں ہے تو کہ میں

کس کی نمود کے لیے شام و سحر ہیں گرم سیر
شانہ روزگار پر بار گراں ہے تو کہ میں

تو کف خاک و بے بصر، میں کف خاک و خودنگر
کشت وجود کے لیے آب رواں ہے تو کہ میں

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: