(Bal-e-Jibril-031) (خودی کی شوخی و تندی میں کبر و ناز نہیں) Khudi Ki Shaukhi-o-Tundi Mein Kibar-o-Naz Nahin

خودی کی شوخی و تندی میں کبر و ناز نہیں

خودی کی شوخی و تندی میں کبر و ناز نہیں
جو ناز ہو بھی تو بے لذت نیاز نہیں

نگاہ عشق دل زندہ کی تلاش میں ہے
شکار مردہ سزاوار شاہباز نہیں

مری نوا میں نہیں ہے ادائے محبوبی
کہ بانگ صور سرافیل دل نواز نہیں

سوال مے نہ کروں ساقی فرنگ سے میں
کہ یہ طریقہ رندان پاک باز نہیں

ہوئی نہ عام جہاں میں کبھی حکومت عشق
سبب یہ ہے کہ محبت زمانہ ساز نہیں

اک اضطراب مسلسل، غیاب ہو کہ حضور
میں خود کہوں تو مری داستاں دراز نہیں
غياب: غائب ہونا، غیر حاضر ہونا۔
اگر ہو ذوق تو خلوت میں پڑھ زبور عجم
فغان نیم شبی بے نوائے راز نہیں
زبور عجم: علامہ کی مشہور فارسی کتاب۔

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: