(Bal-e-Jibril-032) (میر سپاہ نا سزا، لشکر یاں شکستہ صف) Mir-e-Sipah Na Saza, Lashkar Yaan Shakistah Saf

میر سپاہ ناسزا، لشکریاں شکستہ صف

میر سپاہ ناسزا، لشکریاں شکستہ صف
آہ! وہ تیر نیم کش جس کا نہ ہو کوئی ہدف
ہدف: نشانہ۔
تیرے محیط میں کہیں گوہر زندگی نہیں
ڈھونڈ چکا میں موج موج، دیکھ چکا صدف صدف

عشق بتاں سے ہاتھ اٹھا، اپنی خودی میں ڈوب جا
نقش و نگار دیر میں خون جگر نہ کر تلف

کھول کے کیا بیاں کروں سر مقام مرگ و عشق
عشق ہے مرگ با شرف، مرگ حیات بے شرف

صحبت پیر روم سے مجھ پہ ہوا یہ راز فاش
لاکھ حکیم سر بجیب، ایک کلیم سر بکف

مثل کلیم ہو اگر معرکہ آزما کوئی
اب بھی درخت طور سے آتی ہے بانگ’ لا تخف

خیرہ نہ کر سکا مجھے جلوہ دانش فرنگ
سرمہ ہے میری آنکھ کا خاک مدینہ و نجف

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: