(Bal-e-Jibril-034) (یہ دیر کہن ہے، عنبر خس و خاشاک) Ye Dair-e-Kuhan Hai, Anbar-e-Khas-o-Khashaak

یہ دیر کہن کیا ہے، انبار خس و خاشاک

یہ دیر کہن کیا ہے، انبار خس و خاشاک
مشکل ہے گزر اس میں بے نالہ آتش ناک

نخچیر محبت کا قصہ نہیں طولانی
لطف خلش پیکاں، آسودگی فتراک
نخچير: شکار کیا ہوا پرندہ یا جانور۔
لطف خلش پيکاں: تیر لگنے کے درد کا مزا۔
آسودگي فتراک: شکار بند میں لٹک جانے کا سکون۔
کھویا گیا جو مطلب ہفتاد و دو ملت میں
سمجھے گا نہ تو جب تک بے رنگ نہ ہو ادراک
ہفتاد و دو: بہتّر
اک شرع مسلمانی، اک جذب مسلمانی
ہے جذب مسلمانی سر فلک الافلاک
فلک الافلاک:آسمانوں کا آسمان، یعنی عرش۔
اے رہرو فرزانہ، بے جذب مسلمانی
نے راہ عمل پیدا نے شاخ یقیں نم ناک

رمزیں ہیں محبت کی گستاخی و بے باکی
ہر شوق نہیں گستاخ، ہر جذب نہیں بے باک

فارغ تو نہ بیٹھے گا محشر میں جنوں میرا
یا اپنا گریباں چاک یا دامن یزداں چاک

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: