(Bal-e-Jibril-035) (کمال ترک نہیں آب و گل سے مہجوری) Kamal-e-Tark Nahin Aab-o-Gill Se Mahjoori

کمال ترک نہیں آب و گل سے مہجوری

کمال ترک نہیں آب و گل سے مہجوری
کمال ترک ہے تسخیر خاکی و نوری
مہجوري: جدائی، علیحدگی۔
میں ایسے فقر سے اے اہل حلقہ باز آیا
تمھارا فقر ہے بے دولتی و رنجوری
اہل حلقہ:تصوّف کی ایک اصطلاح۔
نہ فقر کے لیے موزوں، نہ سلطنت کے لیے
وہ قوم جس نے گنوایا متاع تیموری

سنے نہ ساقی مہ وش تو اور بھی اچھا
عیار گرمی صحبت ہے حرف معذوری

حکیم و عارف و صوفی، تمام مست ظہور
کسے خبر کہ تجلی ہے عین مستوری

وہ ملتفت ہوں تو کنج قفس بھی آزادی
نہ ہوں تو صحن چمن بھی مقام مجبوری
اہل حلقہ:متوجہ ، مہربان۔
برا نہ مان، ذرا آزما کے دیکھ اسے
فرنگ دل کی خرابی، خرد کی معموری

%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close