(Bal-e-Jibril-057) (ڈھونڈ رہا ہے فرنگ عیش جہاں کا دوام) Dhoond Raha Hai Farang Aysh-e-Jahan Ka Dawam

ڈھونڈ رہا ہے فرنگ عیش جہاں کا دوام

ڈھونڈ رہا ہے فرنگ عیش جہاں کا دوام
وائے تمنائے خام، وائے تمنائے خام!

پیر حرم نے کہا سن کے مری روئداد
پختہ ہے تیری فغاں، اب نہ اسے دل میں تھام

تھا ارنی گو کلیم، میں ارنی گو نہیں
اس کو تقاضا روا، مجھ پہ تقاضا حرام

گرچہ ہے افشائے راز، اہل نظر کی فغاں
ہو نہیں سکتا کبھی شیوہ رندانہ عام

حلقہ صوفی میں ذکر، بے نم و بے سوز و ساز
میں بھی رہا تشنہ کام، تو بھی رہا تشنہ کام

عشق تری انتہا، عشق مری انتہا
تو بھی ابھی ناتمام، میں بھی ابھی ناتمام

آہ کہ کھویا گیا تجھ سے فقیری کا راز
ورنہ ہے مال فقیر سلطنت روم و شام

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: