(Bal-e-Jibril-060) (حادثہ وہ جو ابھی پردہ افلاک میں ہے) Hadsa Woh Jo Abhi Parda’ay Aflak Mein Hai

حادثہ وہ جو ابھی پردہ افلاک میں ہے

حادثہ وہ جو ابھی پردہ افلاک میں ہے
عکس اس کا مرے آئینہ ادراک میں ہے

نہ ستارے میں ہے، نے گردش افلاک میں ہے
تیری تقدیر مرے نالہ بے باک میں ہے

یا مری آہ میں کوئی شرر زندہ نہیں
یا ذرا نم ابھی تیرے خس و خاشاک میں ہے

کیا عجب میری نوا ہائے سحر گاہی سے
زندہ ہو جائے وہ آتش کہ تری خاک میں ہے

توڑ ڈالے گی یہی خاک طلسم شب و روز
گرچہ الجھی ہوئی تقدیر کے پیچاک میں ہے

%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close