(Bal-e-Jibril-062) (ہوا نہ زور سے اس کے، کوئی گریبان چاک) Huwa Na Zor Se Uss Ke, Koi Gireban Chaak

ہوا نہ زور سے اس کے کوئی گریباں چاک

ہوا نہ زور سے اس کے کوئی گریباں چاک
اگرچہ مغربیوں کا جنوں بھی تھا چالاک

مے يقيں سے ضمير حيات ہے پرسوز
مدرسہ يا رب يہ آب آتش ناک نصيب
آب آتش ناک: آگ بھرا پانی۔
عروج آدم خاکی کے منتظر ہیں تمام
یہ کہکشاں، یہ ستارے، یہ نیلگوں افلاک

یہی زمانہ حاضر کی کائنات ہے کیا
دماغ روشن و دل تیرہ و نگہ بے باک
دل تيرہ: دل کے اندر کا اندھیرا۔
تو بے بصر ہو تو یہ مانع نگاہ بھی ہے
وگرنہ آگ ہے مومن، جہاں خس و خاشاک
بے بصر: بینائی سے محروم۔
خس و خاشاک: گھاس پھوس۔
زمانہ عقل کو سمجھا ہوا ہے مشعل راہ
کسے خبر کہ جنوں بھی ہے صاحب ادراک
صاحب ادراک: عقل و فہم والا۔
جہاں تمام ہے میراث مرد مومن کی
میرے کلام پہ حجت ہے نکتہ لولاک
لولاک: مراد ہے محمد (صلعم) جن کو صاحب لولاک بھی کہتے ہیں۔

%d bloggers like this:
search previous next tag category expand menu location phone mail time cart zoom edit close