(Bal-e-Jibril-121) (قید خانے میں معتمد کی فریاد) Qaid Khane Mein Ma’utmid Ki Faryad

قید خانے میں معتمد کی فریاد

اک فغان بے شرر سینے میں باقی رہ گئی
سوز بھی رخصت ہوا، جاتی رہی تاثیر بھی

مرد حر زنداں میں ہے بے نیزہ و شمشیر آج
میں پشیماں ہوں، پشیماں ہے مری تدبیر بھی
ميں: آزاد مرد قید میں۔ مرد حر زنداں
خود بخود زنجیر کی جانب کھنچا جاتا ہے دل
تھی اسی فولاد سے شاید مری شمشیر بھی

جو مری تیغ دو دم تھی، اب مری زنجیر ہے
شوخ و بے پروا ہے کتنا خالق تقدیر بھی!

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: