(Bal-e-Jibril-145) (ستارے کا پیغام) Sitare Ka Pegham

ستارے کاپیغام

مجھے ڈرا نہیں سکتی فضا کی تاریکی
مری سرشت میں ہے پاکی و درخشانی
تو اے مسافر شب! خود چراغ بن اپنا
کر اپنی رات کو داغ جگر سے نورانی

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: