(Bang-e-Dra-158) (میں اور تو) Mein Aur Tu

میں اورتو

نہ سلیقہ مجھ میں کلیم کا نہ قرینہ تجھ میں خلیل کا
میں ہلاک جادوئے سامری، تو قتیل شیوئہ آزری

میں نوائے سوختہ در گلو، تو پریدہ رنگ، رمیدہ بو
میں حکایت غم آرزو، تو حدیث ماتم دلبری
در گلو: حلق میں اٹکی ہوئی۔
مرا عیش غم،مرا شہد سم، مری بود ہم نفس عدم
ترا دل حرم، گرو عجم ترا دیں خریدہ کافری
سم: زہر۔
مري بود ہم نفس عدم: میرا ہونا نہ ہونے کی طرح ہے۔
دم زندگی رم زندگی، غم زندگی سم زندگی
غم رم نہ کر، سم غم نہ کھا کہ یہی ہے شان قلندری

تری خاک میں ہے اگر شرر تو خیال فقر و غنا نہ کر
کہ جہاں میں نان شعیر پر ہے مدار قوت حیدری
نان شعير: جو کی روٹی۔
کوئی ایسی طرز طواف تو مجھے اے چراغ حرم بتا!
کہ ترے پتنگ کو پھر عطا ہو وہی سرشت سمندری

گلہء جفائے وفا نما کہ حرم کو اہل حرم سے ہے
کسی بت کدے میں بیاں کروں تو کہے صنم بھی ‘ہری ہری’

نہ ستیزہ گاہ جہاں نئی نہ حریف پنجہ فگن نئے
وہی فطرت اسد اللہی وہی مرحبی، وہی عنتری
ستيزہ گاہ: میدان جنگ۔
حريف پنجہ فگن: پنجہ آزما حریف۔
مرحبي: مرحب خیبر کے مرکزی قلعہ کا سردار تھا۔
کرم اے شہ عرب و عجم کہ کھڑے ہیں منتظر کرم
وہ گدا کہ تو نے عطا کیا ہے جنھیں دماغ سکندری

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: