(Bang-e-Dra-165) (یہ سرود قمری و بلبل فریب گوش ہے) Ye Surood-e-Qumri-o-Bulbul Faraib-e-Gosh Hai

یہ سرود قمری و بلبل فریب گوش ہے

یہ سرود قمری و بلبل فریب گوش ہے
باطن ہنگامہ آباد چمن خاموش ہے

تیرے پیمانوں کا ہے یہ اے مےء مغرب اثر
خندہ زن ساقی ہے، ساری انجمن بے ہوش ہے

دہر کے غم خانے میں تیرا پتا ملتا نہیں
جرم تھا کیا آفرینش بھی کہ تو روپوش ہے

آہ! دنیا دل سمجھتی ہے جسے، وہ دل نہیں
پہلوئے انساں میں اک ہنگامہء خاموش ہے

زندگی کی رہ میں چل، لیکن ذرا بچ بچ کے چل
یہ سمجھ لے کوئی مینا خانہ بار دوش ہے

جس کے دم سے دلی و لاہور ہم پہلو ہوئے
آہ، اے اقبال وہ بلبل بھی اب خاموش ہے

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: