(Bang-e-Dra-170) (تہ دام بھی غزل آشنا رہے طایران چمن تو کیا) Teh-e-Daam Bhi Ghazal Aashna Rahe Tairan-e-Chaman To Kya

تہ دام بھی غزل آشنا رہے طائران چمن تو کیا

تہ دام بھی غزل آشنا رہے طائران چمن تو کیا
جو فغاں دلوں میں تڑپ رہی تھی، نوائے زیر لبی رہی
نوائے زير لبي: وہ گانا جو لبوں تک نہ آیا۔
ترا جلوہ کچھ بھی تسلی دل ناصبور نہ کر سکا
وہ گریہ سحری رہا، وہی آہ نیم شبی رہی

نہ خدا رہا نہ صنم رہے، نہ رقیب دیر حرم رہے
نہ رہی کہیں اسد اللہی، نہ کہیں ابولہبی رہی

مرا ساز اگرچہ ستم رسیدئہ زخمہ ہائے عجم رہا
وہ شہید ذوق وفا ہوں میں کہ نوا مری عربی رہی

Comments are closed.

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: