(Bang-e-Dra-180) (ہم مشرق کے مسکینوں کا دل مغرب میں جا اٹکا ہے) Hum Mashriq Ke Maskeenon Ka Dil Maghrib Mein Ja Atka Hai

ہم مشرق کے مسکینوں کا دل مغرب میں جا اٹکا ہے ہم مشرق کے مسکینوں کا دل مغرب میں جا اٹکا ہے واں کنڑ سب بلوری ہیں یاں ایک پرانا مٹکا ہے اس دور میں سب مٹ جائیں گے، ہاں! باقی وہ رہ جائے گا جو قائم اپنی راہ پہ ہے اور پکا اپنی ہٹ... Continue Reading →

(Bang-e-Dra-178) (تہذیب کے مریض کو گولی سے فائدہ) Tehzeeb Ke Mareez Ko Goli Se Faida !

تہذیب کے مریض کو گولی سے فائدہ! تہذیب کے مریض کو گولی سے فائدہ! دفع مرض کے واسطے پل پیش کیجیے تھے وہ بھی دن کہ خدمت استاد کے عوض دل چاہتا تھا ہدیہء دل پیش کیجیے بدلا زمانہ ایسا کہ لڑکا پس از سبق !"کہتا ہے ماسٹر سے کہ "بل پیش کیجیے

(Bang-e-Dra-176) (تعلیم مغربی ہے بہت جرات آفریں) Taleem Maghrabi Hai Bohat Jura’at Afreen

تعلیم مغربی ہے بہت جرات آفریں تعلیم مغربی ہے بہت جرات آفریں پہلا سبق ہے، بیٹھ کے کالج میں مار ڈینگ بستے ہیں ہند میں جو خریدار ہی فقط آغا بھی لے کے آتے ہیں اپنے وطن سے ہینگ آغا: مراد ہے افغان۔ میرا یہ حال، لوٹ کی ٹو چاٹتا ہوں میں ان کا یہ... Continue Reading →

Blog at WordPress.com.

Up ↑